histroy of lahore

12
637
histroy of lahore
histroy of lahore

histroy of lahore

لاہور کی سرگذشت

histroy of lahore

لاہور کی سرگذشت اتنی ہی قدیم ہے جتنا یہ شہر ۔۔۔شہر اپنے حلیے انسانوں کی طرح بدلتے رہتے ہیں شہر انسانوں کی طرح جیتے مرتے ہیں وہ شہر جو کھبی عروس الباد کہلاتے تھے اب ان کا نام نشان تک بھی باقی نہیں ہے تاریخ کی کتابوں میں صرف ان کا نام درج ہے لاہور ان شہروں میں سے ایک ہے جو بیس مرتبہ تاراج ہوا اور بیس مرتبہ آباد ہوا اس تخریب و تعمیر کے ساتھ ساتھ اس کا حلیہ بھی بدلتا رہا شاید آپکوں یقن نہ آسکے سول سکریٹریٹ کے عقب میں دریائے راوی بہتا تھا جو چوبرجی سے جا ملتا تھا دریائے راوی میں بحری جہاز بھی چلتا تھا جس کا موجد رنجیت سنگھ تھا۔
یہ شہر ابتدا ہی سے تاریخ میں مشہور تھا لیکن اس کی تاسیس کا عہد مہد قیاسی ہے تاہم ہر مقامی اور اجنبی مورخ نے لاہور کے بارے میں کچھ نہ کچھ لکھاں ہے جس سے اس شہر کے ماضی کی حالت کا کچھ پتہ چلتا ہے

لاہور کا نام

لاہور شہر کے ابتدائی نام کے بارے میں مختلف عہدوں کے مورخوں نے مختلف نام بتائے ہیں اور قیاس ہے کہ لاہور کے بارہ کے کریب مختلف نام تھے لیکن سب اسی لفظ کی بدلی ہوئی اور ابتدائی شکلیں ہے
لاہور کا موجودہ نام سب سے پہلے امیر خسرونے استعمال کیا تھا
ؒ لاہور کی تاسیسں
جس طرح لاہور کے نام کے بارے میں مختلف روایتں ہیں اسی طرح لاہور کی تاسیسں کے بارے میں بھی مختلف خیال ملتے ہیں تاریخ میں ملتے ہیں مورخوں کی ایک بڑی تعداد کا کہنا ہے کہ لاہور ایک ایساں اساطیری شہر ہے اور اس کا وجود رام چندر کے زمانے سے وجود میں ہے 

 لاہور کیوں اہم تھا

محمودغزنوی کے حملے کے سے لے کر عہد حاضر تک لاہور صوبائی دارالخلافہ رہا ہے
تاریخ میں اسے کبھی وہ اہمیت یا مرکزیت حاصل نہیں رہی جو دہلی اور آگرہ یا کلکتہ کو تھی اس شہر میں وہ شاہانہ شکوہ بھی نہیں جو دہلی اور آگرہ کا تھا لیکن اس کے باوجود لاہور شہر کا نام ہر اہم مورخ نے لیا ہے لاہورکی اہمیت کی ایک وجہ یہ ہے کہ لاہور ایک گزر گاہ پر واقع ہے شمال مغرب علاقوں سے جتنے حکمران آئے ان کا خدف دہلی کو فتح کرنا تھا لاہور دہلی کے راستے پر واقح تھا پنجاب کے دوسرے علاقوں کی نسبت لاہور زیادہ ترقی یافتہ تھا سیاسی اعتبار سے بھی لاہور ایک ایسا علاقہ تھا جہاں سے پنجاب کے مختلف علاقوں کو کنٹرول کرنا آسان تھا

لاہور کا محل وقوع 

لاہور شہر بیک وقت ڈسرکٹ ہیڈ کواٹر اور صوبہ پنجاب کا دارالخلافہ ہے
مغلوں اور ان سے پہلے بھی لاہور کو صوبہ لاہور سے تعبیر کیا گیا ہے جس میں گوجرانوالہ اور سیالکوٹ بھی شامل ہے لاہور سطح سمندر سے سات سو باون فٹ بلند ہے یہ دریائے راوی کے بائیں کنارے واقع ہے اور جنوب مغرب میں ملتان واقح ہے کسی زمانے میں یہ دریائے راوی کے بہت قریب تھا راوی پنجاب کے پانچ دریاؤ ں میں سب سے چھوٹا دریا ہے جو لاہور کے شمال کی جانب اب پیچھے ہٹتا ں جا رہا ہے 
اگلی پوسٹ میں لاہور کے بارہ دروازو کے بارے میں بتایا جائے گا

مزید اردو پوسٹ کیلئے روزانہ ہماری ویب سائٹ بیسٹ اردو ڈاٹ کام وزٹ کریں اور اپنا ای میل درج کر کے سب سکرائب کریں اور ہر پوسٹ بذریعہ ای میل اپنے ان باکس میں حاصل کرے شکریہ

Click here and download besturdu.com android app

SHARE
Previous articleXiaomi Mi 8
Next articlelahore k 13 darwaze

12 COMMENTS

  1. 倩碧三步驟還原潤膚膠,清爽好吸收的凝膠質地,每天使用兩次,可藉由複製健康肌膚的正確油水平衡,重建流失水分,重現光透潤澤。最適合混和偏油與油性肌膚使用

  2. 前額拉皮、雙眼皮手術、提眉手術、抬頭紋、三角眼、眉眼下垂、眉尾下垂、眼尾下垂、眉尾提拉等一些相關議題、似是而非或有爭議的事項的披露與討論。

  3. 關于Ion Magnum技術: 它的作用是加快脂肪代謝而轉化成肌肉。專業設計的微電流模擬大腦到肌肉的正常神經傳導。乙醯膽鹼及ATP(産生能量的物質)都是由神經末梢釋放的。神經元共振導致神經末梢持續不斷的釋放ATP,甚至能達到正常釋放量的500。 Ion Magnum應用的是世界定級的神經生理學技術,它加快脂肪燃燒的速度,增强肌肉收縮,提高基礎代謝率(指的是你靜息狀態下消耗卡路里的速率)。複雜的微電流包含2000次與正常生理過程的相互作用,由此達到人體自然狀態下所不能達到的效果。它可以加快能量的轉化,增强體力和運動能力。 Ion Magnum目前由位於英國的創新科學研究中心開發、製造,該中心是由歐盟提供資金支持的。該設備及其組件均是由英國頂級的科學家手工製作的。該産品有CE標志,CE標志是歐洲共同市場的安全標志。 Ion Magnum基於最新的起搏器技術。

  4. 當蛋白線埋入皮膚後,皮下組織會將蛋白線視為異物,啟動異物反應,因此刺激膠原蛋白生長,且可促進新陳代謝,更新老化肌膚,所以客戶在術後也會發覺膚質變得較透亮白皙。膠原蛋白提拉線像一個“磁力線”一樣,將埋入處附近的肌肉和脂肪固定在原處,不會往下墜,其後會吸引皮下組織往蛋白線集中部位移動,就會逐漸產生提拉的緊實效果。也被用於填充美容的微整形,蛋白線材就好比蓋房子的鋼骨支架,先埋入皮膚當作基底結構,然後再注入好比水泥的玻尿酸或自體脂肪,因為有吸附力不易擴散,就可穩定固定住填充物,讓立體支撐力效果更好。

  5. 即日取款,還款期長達36期。自主財務,輕鬆還款無壓力。集誠是你可靠的財務策劃師! 貸款額高達30萬. 多元化的低息網上貸款服務. 10分鐘極速批核. 只需簡單文件. 還款期長達36期. 你可靠的財務策劃師. 服務: 私人貸款, 業主貸款, 公務員貸款, 樓宇按揭, 升學貸款, 現金周轉, 清還咭數.

  6. I simply want to tell you that I’m beginner to blogging and honestly liked you’re blog. More than likely I’m planning to bookmark your website . You certainly have wonderful stories. Regards for sharing your blog site.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here